پیر 20 جنوری 2020ء
پیر 20 جنوری 2020ء

اہم خبریں

نوجوانی میں بڑھاپا،موبائل کا استعمال چپکے چپکے آپ کا کونسا بڑا نقصان کر رہا ہے؟ ماہرین نے انتباہ جاری کر دیا

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)اپنے کمپیوٹر اور موبائل فونز کی اسکرین کے سامنے گھنٹوں گزارنا چہرے پر جھریوں کو وقت سے دس سال قبل ہی نمودار کرنے کا باعث بن سکتا ہے یا یوں کہہ لیں کہ قبل از وقت بڑھاپا طاری ہوسکتا ہے۔یہ انتباہ برطانیہ میں ہونے والی ایک تحقیق میں سامنے آیا۔ تحقیق کے مطابق گھنٹوں تک اسکرینز کے سامنے وقت گزارنا نوجوانی میں ہی جھریوں کے سامنے آنے کا باعث بن سکتا ہے۔تحقیق میں بتایا کہ آج کل نوجوانوں کے چہروں پر قبل از وقت بڑھاپے کے آثار نمودارہونے کی ذمہ داری بہت زیادہ وقت اسکرینوں کے سامنے گزارنا googletag.pubads().definePassback('/1001388/JW_JavedCh', [1, 1]).display(); ہے۔تحقیق کے مطابق بہت جلد وہ وقت آئے گا جب صرف 25 سال کی عمر میں ہی نوجوانوں کو جھریوں سے نجات کے لیے طبی مدد لینا پڑا کرے گی۔محققین کا کہنا تھا کہ گزشتہ پانچ برسوں کے دوران ایسے نوجوانوں کی تعداد میں چار گنا اضافہ دیکھنے میں آیا ہے جن کے چہروں پر جھریاں نمودار ہوچکی ہیں حالانکہ ایسا ہونا عام حالات میں ممکن نہیں ہوتا۔انہوں نے بتایا کہ اس کی وجہ اسکرینوں کے سامنے اپنا زیادہ وقت گزارنا ہے۔

پاکستان

”اونچی دکان،پھیکاپکوان“ناقص انتظامات پر 3 انتہائی اہم شادی ہال سیل، عوام کو کیا چیز کھلائی جارہی تھی؟ جان کر آپ کا کلیجہ منہ کو آئے گا

لاہور(این این آئی) اونچی دکانوں کے پھیکے پکوان ۔ڈائریکٹر جنرل پنجاب فوڈ اتھارٹی عرفان نواز میمن کی سربراہی میں لاہور کے مختلف شادی ہالوں کی چیکنگ کی گئی۔تفصیلات کے مطابق 41 معروف شادی ہالوں کی چیکنگ کے دوران ناقص انتظامات پر3 شادی ہال سیل جبکہ 20کو بھاری جرمانے اور15کووارننگ نوٹسز جاری کیے گئے۔باسی کھانوں کی موجودگی پرگارڈن ٹاؤن میں پرنس ہال،گلشن راوی میں ملن میرج ہال اور گلبرگ میں شادمانی شادی ہال کو سیل کردیا۔ڈی جی فوڈ اتھارٹی کا کہنا تھا کہ زائدالمیعاد گوشت، گلی سڑی سبزیوں اور کھلے ملاوٹی مصالحہ جات کے استعمال پر کارروائیاں عمل میں لائی گئیں۔اسی googletag.pubads().definePassback('/1001388/JW_JavedCh', [1, 1]).display(); طرح کیچن ایریا میں واش روم، حشرات کی بھرماراور صفائی کے انتہائی ناقص انتظامات پر گریشیس بینکویٹ ہال، ٹوپاز ایونٹ کمپلیکس، ظفر کوکنگ اینڈ فوڈ سپلائی کو بھاری جرمانے عائدکیے گئے۔مزید برآں لبرٹی کیسل بینکویٹ ہال،تاج محل، ایمپائر سیگنیچر مارکی،ایوان اکبری میرج ہال،ڈریم پیلس،قصر امیر،مروا بینکویٹ ہال،کورس ایونٹ اینڈویٹنگ،نور جہاں، سپائر ہال،گورمے کیچن،نیو چاندی ہال،گلشن بینکویٹ اور ٹوپازمارکی کو بھی جرمانے عائد کیے۔ علاوہ ازیں انتظامات میں مزید بہتری کے لیے 15شادی ہالوں کو وارننگ نوٹسز بھی جاری کیے۔عرفان میمن کامزید کہناتھا کہ پنجاب فوڈ اتھارٹی روزانہ کی بنیادوں پر شادی ہالوں میں بچنے والے کھانوں کو ٹھکانے لگانے کا نظام بھی وضع کر رہی ہے۔اضافی کھانا سٹور یا ضائع کرنے کی بجائے مستحق افراد تک پہنچایا جائے گا۔

انٹرنیشنل

مقبوضہ کشمیر کے بعد نئی دہلی میں بھی نیشنل سیکیورٹی ایکٹ نافذ،اس ایکٹ کے تحت بھارتی حکومت کیا کر سکتی ہے؟

نئی دہلی (این این آئی)شہریت کے منتازع قانون کے خلاف احتجاج سے خوفزدہ بھارتی حکومت نے دارالحکومت نئی دہلی میں بھی نیشنل سکیورٹی ایکٹ (این ایس اے) نافذ کردیا۔نئی دہلی میں شہریت کے متنازع قانون کے خلاف ہر طبقہ فکر سے تعلق رکھنے والے لوگ احتجاج کررہے ہیں جس میں جواہر لعل نہرو یونیورسٹی (جے این یو) اور جامعہ ملیہ اسلامیہ کے طلبہ و طالبات بھی شامل ہیں۔بھارتی حکومت اِس احتجاج سے اس قدر خوفزدہ ہے کہ اب نیشنل سیکیورٹی ایکٹ نافذ کردیا ہے۔بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق نئی دہلی کے لیفٹیننٹ گورنر انیل بائیجال نے ایک حکمنامے کے ذریعے googletag.pubads().definePassback('/1001388/JW_JavedCh', [1, 1]).display(); 3 ماہ کے لیے نیشنل سیکیورٹی ایکٹ نافذ کیا جس کی مدت 19 جنوری سے 18 اپریل تک ہوگی۔این ایس اے کے تحت پولیس کو اختیا ر دیا گیا ہے کہ قومی سلامتی کے خطرے کے پیش نظر کسی بھی شخص کوحراست میں لے سکتی ہے اور ایکٹ کے تحت پولیس 10 دن بنا جرم بتائے کسی بھی شخص کو اپنی حراست میں رکھ سکتی ہے۔خیال رہے کہ اگست 2019 میں آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد مقبوضہ کشمیر میں بھی نیشنل سیکیورٹی ایکٹ نافذ ہے۔متنازع شہریت بل 9 دسمبر 2019 کو بھارتی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں (لوک سبھا) سے منظور کروایا گیا تھا اور 11 دسمبر کو ایوان بالا (راجیہ سبھا) نے بھی اس بل کی منظوری دیدی تھی۔بھارتی پارلیمنٹ کے ایوانِ زیریں میں وزیرِ داخلہ امیت شاہ کی جانب سے بل پیش کیا گیا جس کے تحت پاکستان، بنگلا دیش اور افغانستان سے بھارت جانے والے غیر مسلموں کو شہریت دی جائے گی لیکن مسلمانوں کو نہیں۔متنازع شہریت بل بھارتی صدر رام ناتھ کووند کے دستخط کے بعد باقاعدہ قانون کا حصہ بن گیا ہے۔

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں