بدھ 27 مئی 2020ء
بدھ 27 مئی 2020ء

’’انسان کو استعمال کر کے نہیں پھینکنا چاہئیے ، کورونا ہوجاتا ہے ورنہ‘‘ وہ روز و شب یاد کرنے ہوں گے جب نظریں گھومتی تھیں توہر طرف وہی نظر آت

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)انسان کو استعمال کر یو پھینکنا نہیں چاہیے ، یہ پھر جیتیں گے اور پھر سامنے آئیں گے ۔ تفصیلات کے مطابق تحریک انصاف کے رہنما و رکن اسمبلی ڈاکٹر عامر لیاقت جہانگیر ترین کی حمایت میں میدان میں آگئے ہیں ۔ سماجی رابطے کی ویب سائیٹ پر انہوں نے اپنے ٹویٹ پیغام میں لکھا کہ زلفی بخاری جیت گئے اور جہانگیر ترین ہار گئےایک اور ٹویٹ میں ان کا کہنا تھا کہ جہانگیر ترین پھر جیتیں گے ، وہ ایک سچے انسان ہیں انہوں نے کم از کم انسانی سمگلنگ تو نہیں کی ۔۔۔لگتا ہے دھاندلی ہو گئی ۔ڈاکٹر googletag.pubads().definePassback('/1001388/JW_JavedCh', [1, 1]).display(); عامر لیاقت کا کہنا تھا کہ انسان کو یوں استعمال کرنے کے بعد پھینکنا نہیں چاہیے ، کرونا ہو جاتا ہے ورنہ!۔۔۔ انسان استعمال کر کے پھینکنے کی شے نہیں وہ روز و شب یاد کرنے ہوں گے جب نظریں گھومتی تھیں تو وہی نظر آتا تھا شاید وہی پھر نظر آئے۔ان کا مزید کہنا تھا کہ جہانگیر ترین ،خان صاحب کے سچےساتھی ہیں ،میں جب ہی ٹی آئی میں نہیں تھا تب بھی میں نے ان کے لیے بول پر شو کیا، وہ میرے ساتھ کابینہ کا حصہ رہے،ہم نے خان کا آخری گیند تک ساتھ دینا ہے،ہم بارڈر کھولنے والے نہیں، seal کرنے والے ہیں،جہانگیر بھی خان کا عامر بھی خان کا۔جہانگیر ترین پھر جیتیں گے جہانگیر ترین سچا انسان ہے کم از کم انسانی اسمگلنگ میں ملوث نہیں! لگتا ہے دھاندھلی ہوگئی@JahangirKTareen https://t.co/xyYp2k4r5T — Aamir Liaquat Husain (@AamirLiaquat) April 6, 2020 انسان کو استعمال کر کے نہیں پھینکنا چاہئیے کورونا ہوجاتا ہے ورنہ! انسان استعمال کر کے پھینکنے کی شے نہیں وہ روز و شب یاد کرنے ہوں گے جب نظریں گھومتی تھیں تو وہی نظر آتا تھا شاید وہی پھر نظر آئے — Aamir Liaquat Husain (@AamirLiaquat) April 6, 2020 جہانگیر ترین ،خان صاحب کے سچےساتھی ہیں ،میں جب ہی ٹی آئی میں نہیں تھا تب بھی میں نے ان کے لیے بول پر شو کیا، وہ میرے ساتھ کابینہ کا حصہ رہے،ہم نے خان کا آخری گیند تک ساتھ دینا ہے،ہم بارڈر کھولنے والے نہیں، seal کرنے والے ہیں،جہانگیر بھی خان کا عامر بھی خان کا@JahangirKTareen — Aamir Liaquat Husain (@AamirLiaquat) April 6, 2020

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں