منگل 18 جون 2019ء
منگل 18 جون 2019ء

مصر میں فرعون خفرع کے کاہنوں کے بڑے مقبرے کی دریافت

قاہرہ(این این آئی)مصر کی وزارت آثار قدیمہ نے اعلان کیا ہے کہ قاہرہ کے مضافاتی علاقے الجیزہ میں شاہ خفرع کے کاہنوں کا بڑا مقبرہ دریافت ہوا ہے۔ الجیزہ قاہرہ کی کمشنریوں میں سے ایک ہے۔ ایک زمانے میں یہ مصر کے دارالحکومت قاہرہ سے فاصلے پر واقع ہوتا تھا۔لیکن اب یہ قاہرہ شہر کا حصہ بن چکا ہے۔ الجیزہ ہی میں دنیا بھر میں مشہور ’’اھرامات‘‘ اور’’ ابو الھول‘‘پائے جاتے ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق آثار قدیمہ کی سپریم کونسل کے سیکریٹری جنرل ڈاکٹر مصطفی وزیری نے پریس کانفرنس کے دوران صحافیوں کو بتایا کہ اگست 2018ء کے دوران مصری ماہرین نے کھدائی کا کام شروع کیا تھا۔ انہوں نے پانچویں خاندان کے 2کاہنوں کی مشترکہ قبر دریافت کی ہے۔ یہ دونوں شاہ خفرع کے عہد میں متعدد عہدوں پر فائز تھے۔ ڈاکٹر مصطفی وزیری نے توجہ دلائی کہ تاریخی کھدائیوں کے علاقے میں متعدد قبریں دریافت ہوئی ہیں۔ یہ قدیم ترین تاریخی مقبرہ ہے۔ اسکا تعلق پانچویں خاندان کے دور سے ہے۔ یہ خاندان 2500قبل مسیح میں پایا جاتا تھا۔وزیری نے بتایا کہ قبرستان 2فرضی دروازوں پر مشتمل تھا۔ پہلا دروازہ ’’بحنوی کا‘‘ نامی شخص کا ہے۔ اسکا تعلق پانچویں خاندان کے اخری دور سے ہے۔ اس میں بحنوی کا ، اسکی بیوی اور بیٹے کا مجسمہ ملا ہے۔ بحنوی کا ، 7القاب رکھتا تھا۔ اسکا ایک لقب سینیئر جج ، دوسرا لقب شاہ خفرع کے ھرم کے نگراں ، تیسرا لقب پاک کرنے والے کاہن اور چوتھا لقب دیوتا (ماعت) کاہن کا ہے۔ وزیری نے بتایا کہ دوسرے فرضی دروازے کا تعلق ’’نوی‘‘ نامی شخص سے ہے اس کے 5القاب تھے جن میں سے ایک مقدس عدالت کا سینیئر جج اور دوسرا خفرع کے ھرم گروپ کو پاک کرنے والے کاہن کا تھا۔ وزیری نے بتایا کہ تاریخی کھدائیوں کا کام 3برس تک جاری رہیگا۔ توقعات یہ ہیں کہ یہاں نئے قبرستان دریافت ہونگے۔انہوں نے بتایا کہ اس کے نمائندے نے 3قبرستانوں کا دورہ کیا۔ ان میں سے 2میں لکڑی کے کئی رنگین تابوت نظر آئے۔تیسرا مقبرہ گرینائٹ کے پتھروں کا تھا۔ یہ بحنوی کا اور نوی کاہنوں کا ہے۔

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں