جمعرات 16 جولائی 2020ء
جمعرات 16 جولائی 2020ء

اسلام آباد ( آن لائن ) وفاقی حکومت  پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کے معاملے پر  عوام سے ایک بار پھر ہاتھ کرگئی ، پٹرول 14روپے فی لیٹر سستا کرنے کی بجائے 7 روپے ہی سستا کیا جبکہ  پٹرول پر عائد  لیوی میں 6 روپے 20پیسے فی لیٹر اضافہ کردیاگیاہے ۔وزارت  پٹرولیم کے ذرائع کے مطابق 6 روپے 20پیسے فی لیٹر لیوی میں  اضافے کے بعد یہ پٹرولیم لیوی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہےجو سفارش  حکومت کو کی گئی تھی وہ پٹرول کی قیمتوں میں 14روپے فی لیٹر کمی سے متعلق تھی لیکن  عالمی منڈی میں تیل googletag.pubads().definePassback('/1001388/JW_JavedCh', [1, 1]).display(); کی قیمتوں میں کمی کا پورا فائدہ عوام تک منتقل نہ کیا گیا ۔7روپے پٹرول سستا کرکے 6روپے 20پیسے اس پر لیوی عائد کردی گئی ۔ ذرائع نے بتایا کہ ریونیو میں اضافے کیلئے وزارت خزانہ نے پٹرولیم لیوی بڑھانے کی سفارش کی تھی اوراب یہ شرح 30روپے فی لیٹر تک پہنچ گئی ہے جو اب تک پٹرولیم لیوی کی بلند ترین سطح ہے اورحکومت نے دعویٰ کیا ہے کہ لیوی بڑھانے سے اسے 6ارب روپے کا اضافی ریونیو حاصل ہوگا ۔ ذرائع کا کہنا ہے چونکہ  حکومت کو ایف بی  آر کے ریونیو کے حصول میں بھی شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اور کرونا وائرس کی وجہ سے ریونیو کا ہدف حاصل نہیں کیاجاسکے گا تو لہذا شارٹ فال پورا کرنے کیلئے حکومت متبادل طریقے سے ریونیو  اکٹھا کرنے کی کوشش  کررہی ہے ۔ذرائع نے مزید بتایا کہ اگر عالمی منڈی کی قیمتوں کے مطابق پٹرول کم کیاجاتا تو پاکستان میں اس وقت اس کی قیمت پچاس روپے فی لیٹر سے زیادہ نہ ہوتی مگر گزشتہ ماہ بھی حکومت نے پٹرولیم لیوی بڑھا دی تھی اور  جون کیلئے بھی پٹرولیم لیوی بڑھا دی تاکہ ٹیکس حاصل کیاجاسکے ۔

سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں